بچوں کی صحت 25

بچوں کی صحت کے حوالے سے ضروری ہدایات

بچوں کی صحت کے حوالے سے چند ضروری باتیں جو امید ہے آپ کو بہت فائدہ دیں گیں، بچے سب کہ ایک جیسے ہوتے ہیں پیارے پیارے جو کھیلتے کودتے ہی اچھے لگتے ہیں بچہ جب بیمار ہو جائے تو ہمارے لئے بہت مشکل ہو جاتی ہے بعض اوقات اس کو سنبھالنا، زیل میں ہم نے چند ضروری باتیں بتائی ہیں جو امید ہے آپ کو بہت بہت ساری چیزوں کے بارے میں آگاہ کر دیں گی.

بچے کو کبھی بھی نپل ( چوسنی ) نا دیں . نپل سے بچے کو بیماریوں کا خطرہ بھی ہوتا ہے اور اس كے منہ ( مائوتھ ) کا شیپ بھی خراب ہو جاتا ہے .
6 منتھ کی عمر تک بچے کو صرف ماں کا دودھ پیلاین ، اِس عمر تک بچے کو پانی کی بھی ضرورت نہیں ہوتی ہے کیوں كے ماں كے دودھ میں 88 % پانی ہوتا ہے جو بچے کی ضرورت كے لیے کافی ہوتا ہے .
بچے کو 24 گھنٹے میں تقریباً 8-10 دفعہ دودھ پیلاین ، اور اک دفعہ میں تقریباً 20-30 منٹس تک دونوں طرف سے دودھ پیلاین .
اگر دودھ پیتے وقت بچہ سو جائے تو اس كے سَر ، کان اور پیروں کو سہلا کر اس کو جاجاین اور جب تک اس کا پیٹ پُورا نا بھر جائے اس کو بریسٹ سے نا حاتاین .
اگر بچہ بہت کمزور ہے اور سہی طرح سے دودھ چوستی وقت جلدی تھک جاتا ہے تو اس کو دودھ نکال کر کپ میں ڈال کر اسپون سے پیلاین .
کبھی بھی بچے کو سیدھا لٹا کر دودھ نا پیلاین ، اِس سے سانس رکنے کا دَر ہوتا ہے .
ہمیشہ دودھ پلا کر بچے کو ڈکار ( برپ ) ضرور دلائیں .
بوتل فیڈنگ بچے كے لیے بہت نوخساانداح اور بیماریوں کو خود دعوت دینے کا ذریعہ ہے ، اگر آپ چاہتے ہیں كے آپ کا بچہ صحت مند رہے اور پیٹ اور سینے كے امراض سے بچہ رہے تو اس کو کبھی بھی بوتل سے دودھ یا پانی نا پیلاین .
بچے کو پیدائش كے بعد فوراً نا نیحلاین بلکہ پیدائش كے دوسرے دن بےبی کو باتْھ دیں .
اپنے بچے کو تمام حفاظتی تیکای ویکسینیشن وقت پر لگواین ، یہ آپ كے بےبی کو بہت سی جانلیوا بیماریون سے بچاتی ہیں .
بچے کو ہمیشہ سااف-سوتحری اور روشن جگہ پر سولاین .
جب بچہ کروٹ بدلنے لگے تو اس کو زدہ اونچی جگہ پر نا لیتاین . اگر بیڈ پر لیتاین تو اس كے گرد حفاظت كے لیے تکیے یا کوشیونس لگائیں .
چھوٹے بچے کو اُلٹا نا سولاین .
اگر آپ كے گھر میں بلی یا کوئی اور اینیمل ہے تو چھوٹے بچے کو اس كے ساتھ اکیلا نا چورین .
سردی كے موسم میں بچوں کو دن میں 2-3 دفعہ ساڈے پانی سے بھاپ ( اسٹیم ) دیں ، اِس سے ان کی ناک بند نہیں ہوگی اور وہ سکون سے سوئیں گے .
اپنے بچے کی آنكھوں میں سرمہ / کاجل نا لائیں ، کیوں كے یہ لیاد-پویسونینج کا ذریعہ ہیں .
بچے کو 6مونتحس کی عمر كے بعد نرم اور ہلکی جیزا دینا شروع کریں مثلاً خیتچری ، دالیا ، ساجو-دانا ، بنانا ، دہی ، بوائل آلُو ، کھیر ، وغیرہ مگر ماں کا دودھ 2 سال کی عمر تک ضرور پیلاین .
اگر پیدائش كے بعد بچے کو ( پییلیا ) ہو جائے تو اس کو صبح کی ہلکی ہلکی دھوپ میں تمام کپڑے اُتار کر ، آنكھوں پر رومال رکھ کر لیتاین . پہلے 15مینوتیس تک دھوپ میں سیدحا لیتاین پِھر 15مینوتیس تک سائڈس کر كے لیتاین . مگر اِس تمام عمل كے دوران بچے كے پاس موجود رہیں ، اس کو اکیلا نا چورین . اگر بچے کو زدہ پییلیا ہے تو ڈاکٹرز کو ضرور دیخاین ، کیوں كے اگر پییلیا بڑھ جائے تو بچے كے لیے خطرناک بھی ثابت ہو سکتا ہے .
اپنے گھر کو بابی-پروف بنائی ، تمام ویریس ، بجلی كے آلاٹ ، کنیفیس ، قینچی اور ایسی تمام چیزیں جو بچے كے لیے نوخسانداح ہو سکتی ہیں ، ان کو بچے کی پوحوچ سے دور رکھیں .
تمام ( داواین ) بچے کی پوحوچ سے دور رکھیں ، اگر بچہ کوئی دوا غلطی سے کھا لے تو اس کو فوراً ڈاکٹرز كے پاس لے کر جائیں اور دوا کا پتہ ساتھ رکھ لیں .
اگر بچہ غلطی سے مٹی کا ٹیل ( کیروسین آئل ) پہ لے تو اس کو کبھی الٹی ( vومیتینج ) نا کروائیں ، فوراً اس كے کپڑے اُتار دیں اور ڈاکٹر كے پاس لے جائیں .
بچے کو کھانسی ( کف ) ہونے کی صورت میں تھوڑے سے گرم پانی میں شہد ( ہنی ) ملا کر پیلاین .
کف / نزلہ ( فلو ) کی صورت میں بچے کو اسٹیم دیں .
اگر بچے کو موشن ہو رہے ہوں تو فوراً اس کو Oرس پلانا شروع کر دیں .
1ساال كے بچے کو وہ تمام جیزا خیلاین جو گھر كے باقی لوگ کھاتے ہیں بس مرچ کی مقدار تھوڑی کم رکھیں .
بچوں کو بچپن ہی سے ہر طرح کی جیزا یعنی سبزی ، گوشت ، مرغی ، مچھلی ، دودھ اور اس سے بنی ہوئی چیزیں ، ایگ ، پھل وغیرہ کھانے کی عادت دالیں کیوں كے ہمارے جسم کو ہیلدی رہنے كے لیے ان سب چیزوں کی مناسب مقدار میں ضرورت ہوتی ہے .
نمونیا کی پہچان
اگر بچے کی پسلیاں چلنے لگیں ، یا اس کا سانس تیز تیز چلنے لگے ، یا اس کو سانس لینے میں مشکل ہو رہی ہو تو فوراً بچے کو ڈاکٹر كے پاس لے جائیں . اِس كے ساتھ اگر بچہ بہت زدہ سو رہا ہو ، یا بہت زدہ رو رہا ہو یا اس کا رنگ نیلا ہو رہا ہو یا وہ كھانا پینا چور دے تو فوراً اسپتال یا قریبی ڈاکٹر كے پاس جائیں .
بچے کا كھانا پکانے اور کھلانے سے پہلے اپنے ہاتھ اچھی طرح دھو لیں تاکہ آپ کا بچہ جراثیم سے بچ سکے .
چھہ مہینے سے بڑے بچے کو اگر موشنس ہو جائیں تو اس کو کھانے میں بنانا ، خیتچری اور دہی خیلاین .

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کیا کہتے ہیں؟