ماں اور بیٹے کی محبت بھری داستان 155

ماں اور بیٹے کی محبت بھری داستان

ایک گاؤں میں 10، سال
لڑکے اپنی ماں کے ساتھ
رہتا تھا.
ماں نے سوچا کل میرا بیٹا میلے میں
جائے گا،
اس کے پاس
10 روپے تو ہو،
یہ سوچ کر ماں نے کھتوں میں کام
کرکے شام تک پیسے لےآئی.
بیٹا اسکول سے آکر
بولا کھانا کھا کر
جلدی سو جاتا ہوں، کل میلے میں جانا ہے.
صبح ماں سے بولا –
میں نہانے
جاتا ہوں، ناشتا تیاررکھنا،
ماں نے روٹی بنائی،
دودھ اب چولہے پر تھا ..!
ماں نے دیکھا برتن پکڑنے کے لئے
کچھ نہیں ہے،
اس نے گرم برتن ہاتھ سےاٹھا لیا،
ماں کا ہاتھ جل گیا.
بیٹے نے گردن جھکا کر دودھ پیا
روٹی کھائی اور میلے میں چلا گیا.
شام کو گھر آیا تو ماں نے
پوچھا – میلا دیکھا، 10 روپے
کا کچھ کھایا کہ نہیں .. !!
بیٹا بولا –
ماں آنکھیں بند کر تیرے لئے کچھ
لایا ہوں.
ماں نے آنکھیں بند کی تو بیٹے نے اس
ہاتھ میں گرم برتن اٹھانے کے
لئے آلہ رکھ دیا.
اب ماں تیرے ہاتھ
نہیں جلیں گے.
ماں کی آنکھوں سے آنسو بہنے لگے.
دوستوں،
ماں کے قدموں تلے جنت ہے،
کبھی اسے دکھی مت کرو ، اسکا دل مت دیکھاؤ اور ہمشہ اس کی ہاں میں ہاں ملاؤ کبھی ماں کے آگے اونچا نہ بولو اور ہمشہ ماں کا کہ مانو.
سب کچھ مل جاتا ہے،
پر ماں دوبارہ نہیں ملتی.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کیا کہتے ہیں؟

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.