کیا شادی ایک مجبوری کا نام ہے 180

کیا شادی ایک مجبوری کا نام ہے

شادی اگر مجبوری کا نام ہے تو شادی سے اچھا بندہ اکیلا ٹھیک ہے ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﭘﮩﻠﯽ ﺭﺍﺕ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮔﮭﻮﻧﮕﮭﭧ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ۔۔
ﺳﻨﻮ
ﯾﮧ ﺷﺎﺩﯼ ﺍﯾﮏ ﺯﺑﺮﺩﺳﺘﯽ ﮐﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺗﮭﺎ۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﻮ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﮯ ﺭﺍﺿﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺋﮯ۔۔۔
ﺍﺑﺎ ﮐﻮ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﺗﮭﯽ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺁﮔﮯ ﻟﮍ ﻧﮧ ﺳﮑﺎ۔۔۔
ﻣﯿﺮﯼ ﮨﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﻣﺠﺒﻮﺭﯼ ﺗﮭﯽ۔۔
ﺷﺎﺋﺪ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﭘﯿﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﮮ ﺳﮑﻮﮞ ﮔﺎ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺗﻢ ﺣﻘﺪﺍﺭ ﮨﻮ۔۔
ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﮐﺮ ﻭﮦ ﺍﭨﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ۔۔۔
ﻭﮦ ﮔﻢ ﺻﻢ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﺧﺎﻟﯽ ﮐﻤﺮﮦ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔۔
ﻣﻦ ﻣﯿﮟ ﺁٰﯾﺎ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﭼﯿﺦ ﭼﯿﺦ ﮐﺮ ﺑﻮﻝ ﺩﮮ۔۔۔
ﺍﯾﮏ ﺗﻢ ﮨﯽ ﮐﯿﺎ۔۔
ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺩﻝ ﻭ ﺟﺎﻥ ﺳﮯ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﺗﮭﯽ۔۔
ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮔﺰﺍﺭﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ۔۔ﻏﺮﯾﺐ ﺗﮭﺎ۔۔۔ﭘﺮ ﻣﺤﻨﺘﯽ ﺗﮭﺎ۔۔۔ﺑﺲ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﺴﻨﺪ ﻧﮧ ﺁﯾﺎ۔۔۔ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮨﺎﺭ ﮔﺌﯽ۔۔۔
ﺗﻢ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ۔۔
ﺗﻢ ﻣﺮﺩ ﺗﻮ ﮐﮩﮧ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﻮ ﮨﻢ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﮐﯿﺴﮯ ﮐﮩﯿﮟ۔۔۔
ﺟﺬﺑﺎﺕ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﻟﻔﻈﻮﮞ ﮐﺎ ﭘﯿﺮﮨﻦ ﭼﺎﮦ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﯽ۔۔۔ﺟﯿﺴﮯ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﮯ ﮨﻮﮞ۔۔ﯾﮧ ﭼﭗ ﮐﯽ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﺗﻮﮌ ﺩﻭ ﺁﺝ۔۔۔ﺗﻮﮌ ﺩﻭ۔۔۔۔
ﻣﮕﺮ ﺣﻠﻖ ﺗﮏ ﺁﺗﮯ ﺁﺗﮯ۔۔۔   ﻟﻔﻈﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺷﮑﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﻟﮯ ﻟﯽ۔۔۔۔
ﺁﻭﺍﺯ ﺩﻡ ﺗﻮﮌ ﮔﺌﯽ۔۔
ﻭﮦ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﻧﮧ ﺗﻮﮌ ﺳﮑﯽ۔ :’

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کیا کہتے ہیں؟

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.